عرب ممالک اسرائیل کیساتھ مل کر خفیہ طور پر کیا کر رہے ہیں؟ مسلمانوں کی بے حسی جان کر آپ بھی افسوس کریں گے. معروف پاکستانی فاسٹ بالر رومان رئیس کی شادی کی تصاویر منظر عام پر آگئی. سینما میں فلم دیکھنے کے بعد خاتون پاگل ہو گئی، ہسپتال منتقل فلم میں ایسا کیا تھا کہ اس کا یہ حال ہوا؟. معروف پاکستانی اداکارہ نادیہ جمیل کیساتھ برطانیہ میں گوروں نے ایساانتہائی شرمناک کام کر دیا کہ جان کر ہر پاکستان غصے میں آگ بگولہ ہو جائے. سعودی عرب نے ایک لاکھ سے زائد لوگوں کو حج سے روک دیا، وجہ ایسی کہ جان کر آپ بھی کہیں گے کہ ’’جو ہوا ٹھیک ہوا‘‘. پاکستان کو ایٹمی ہتھیاروں سے محروم کرنے کیلئے امریکہ ، اسرائیل اور بھارت کیا ’’ڈرٹی گیم ‘‘کھیل رہے ہیں. یہ پڑھنے کے بعد آپ پیٹ کے بل ہرگز نہیں سوئیں گے. عمران خان کے خلاف توہین عدالت کی باضابطہ کارروائی شروع ،الیکشن کمیشن نے عمران خان کو کیا کہا کہ؟. افسوس ناک خبرعامر خان کو بری بیماری لاحق ہو گئی ،اب وہ پہچانے نہیں جارہے ہیں؟. پاکستان کے مایہ ناز بلے باز عمران نذیر تو آپ کو یاد ہوں گے آج کل وہ کہاں اور کس حال میں ہیں؟

تیل و گیس تلاش کرنیوالی 3 بڑی کمپنیوں نے کام بند کردیا


1500015000dailyausaf
اسلام آباد (نیٹ نیوز)پاکستان میں تیل و گیس کی تلاش کرنے والی تین کمپنیوں نے اپنا کام بند اور اثاثے فروخت کرنے کا فیصلہ کر لیا۔ماہرین کے مطابق اگر ایسا ہوا تو توانائی کی قلت کے شکار ملک پاکستان میں تیل و گیس کی تلاش کی کوششوں کو شدید دھچکا لگے گا۔انڈسٹری ذرائع کے مطابق گزشتہ سال امریکی سروس کمپنی ویدرفورڈ کے بعد اب تین غیر ملکی کمپنیاں ملک سے جا رہی ہیں، ایکسپلوریشن کمپنیزایسو سی ایشن کے ایک رہنما کے مطابق برطانوی کمپنی پریمیئر کی فروخت آخری مرحلے میں ہے، پریمیئر کے پاس کندڑواری، زمزمہ، قادرپور اور بھٹ میں تیل وگیس کے اثاثے ہیں۔ایسو سی ایشن کے مطابق ایک بڑی یورپی کمپنی او ایم وی نے بھی پاکستان سے نکلنےکا فیصلہ کر لیا ہے

، او ایم وی کے پاس مہر، ساون اور میانو فیلڈز میں اثاثے ہیں، رہنما ایسو سی ایشن مظہر فاروق کے مطابق عرصے سے کام کرنے والی تلو کمپنی بھی پاکستان سے نکلنے کیلئے پر تول لیے۔ تلو کمپنی کے او جی ڈی سی اور بلوچستان میں اثاثے ہیں، مختلف انڈسٹری ذرائع کے مطابق اثاثوں کی خریداری میں ہاشوانی اور الحاج گروپ کی گہری دلچسپی ہے جبکہ او ایم وی خریدار تلاش کر رہی ہے۔انڈسٹری ذرائع کے مطابق تین سال سے تیل و گیس کی تلاش کے علاقوں کیلئے بولیاں نہیں کی گئیں جبکہ کم تیل قیمت اور ایکسپولیریشن پالیسی پر کشش نہ ہونا بھی کمپنیوں کے جانے کی وجہ ہے۔ماہرین کے مطابق کمپنیوں کے پاکستان سے جانے کے بعد ملک کی بڑھتی ہوئی توانائی ضروریات کو بھاری زرمبادلہ خرچ کر کے امپورٹ کے ذریعے ہی حاصل کیا جا سکے گا ، وزیر پیٹرولیم نے معاملےپر سنجیدہ تبصرے سے انکار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایسا جے آئی ٹی کی وجہ سے ہوا ہے۔