ہنر مند افراد کی خدمات حاصل کرنے کے لئے اضافی ادائیگیاں


1499242671dailyausaf
اسلام آباد (ویب ڈیسک)ایک سروے کے مطابق متعدد برطانوی آجروں کو ہنر مند افراد کی قلت کے پیش نظر گزشتہ سال ملازمین کو راغب کرنے کے لئے مارکیٹ کی شرح سے زائد ادائیگی کرنی پڑی۔اوپن یونیورسٹی کی جانب سے 400فرمز کے سروے میں تقریباً تمام کا کہنا تھا کہ اپنی ضرورت کے مطابق ہنر مندورکرز کی خدمات حاصل کرنا مشکل ہوچکا ہے۔ڈسٹینس لرننگ یونیورسٹی نے تجزیہ کیا ہے کہ درپیش مسئلہ کے باعث کمپنیوں کو 2 ارب پونڈز سالانہ کی اضافی رقم برداشت کرنی پڑرہی ہے۔کمپنی کا کہنا ہے کہ بریگزٹ کے باعث بے یقینی کی صورتحال کے نتیجے میں ہنر مند افراد کی موجودگی اور ضروت میں چیلنج پیدا ہوگئی ہے۔سروے کے نتیجے میں پتہ چلا کہ جو لوگ پہلے ہی کام کررہے ہیں وہ کسی دوسرے ایمپلائر کے پاس جاتے ہوئے ہچکچاہٹ کے شکار ہوتے ہیں بعض ای یوشہری برطانوی کردار نہیں چاہتے کیونکہ مستقبل میں امیگریشن قوانین پر غیر یقینی پائی جاتی ہے۔سرکاری اعداد وشمار کے مطابق گزشتہ سال کے آخری تین ماہ میں برطانیہ میں ای یو ورکرز کی تعداد 50000 کم ہوکر 2.3ملین رہ گئی ہے۔سروے میں 56 فیصد فرمز کا کہنا تھا کہ انہوں نے درکار ہنر مند ورکرز کی خدمات حاصل کرنے کے لئے تنخواہوں میں اضافہ کردیا ہے۔چھوٹی اور درمیانہ درجہ کی فرم میں اوسط اضافہ 4150پونڈ جب کہ بڑی فرمز میں اوسط اضافہ 5575 پونڈز کیا گیا ہے