کیا آپ کو معلوم ہے کہ بچوں کا اس انداز میں بیٹھنا خطرے سے خالی نہیں

40 Views

1501750310dailyausaf
اسلام آباد(ویب ڈیسک)بچے ہمیشہ وہ کام کرتے ہیں جو وہ کرنا چاہتےہیں چاہے وہ بیٹھنا کا طریقہ ہی کیوں نہ جس میں وہ آرام محسوس کرتے ہیں اسی انداز میں بیٹھ جاتے ہیں مگرکچھ لوگوں نے اس بات کو نوٹس کیا کہ بچوں کے بیٹھنے چند انداز ایسے ہیں جو مسقبل قریب میں ان کے لئے نقصان کا باعث بن سکتے ہیں۔ ان میں ایک انداز اس طرح کا ہے جس میں بچے دونوں پیروں کو پیچھے کی جانب نکال دیتے ہیں اور دیکھنے میں ڈبلیو شیپ بن جاتا ہے۔ڈبلیو پوزیشن میں بیتٹھنا بچوں میں عام ہے زیادہ تر بچے اسی انداز میں بیٹھتے ہیں کیوں کہ اس انداز میں بیٹھنے کے لئے بچوں کو زیادہ محنت نہیں کرنی پڑتی اس طرح بیٹھنا صرف ہڈیوں کے لئے ہی نہیں بلکہ پورے جسم کے لئے نقصان کا باعث ہے اس کا اثر جسم کی نشونما،جسم کے توازن کے کنٹرول اور جسم کی حرکت پر پڑسکتا ہے۔

بچوں کے گھٹنے اور کولہے بہت حساس ہوتے ہیں اس طرح بیٹھنے سےان پربہت زیادہ دباؤ پڑتا ہے جس کی وجہ سے وہ بڑے ہوکر اپنی باڈی کو موڑ نہیں سکیں گے۔اس طرح بیٹھنے سے ریڑھ کی ہڈی میں کسی حد تک جھکاؤ آجاتا ہے جو انتہائی خطرناک ثابت ہو سکتا ہے اس دباؤ کی وجہ سے جسم کی کچھ ہڈیاں کمزورہوکرمستقبل میں ٹوٹ سکتی ہیں۔ اس کے علاوہ گھٹنے کے پیچھے موجود پٹھا، اس کی اندرونی گردش اور ایڑی کے کورڈ پر پر بھی برا اثر پڑتا ہے جس کی وجہ سے مستقبل میں جسم کو توازن میں رکھنا مشکل ہو سکتا ہے۔بچوں کو ڈبلیو پوزیشن کے بجائے وی پوزیشن میں بیٹھنے کی عادت ڈالیں یہ ان کے لئے ایک اچھا طریقہ ہو سکتا ہے اس میں بچے اپنی ٹانگیں سیدھےرکھتے ہیں وی شیپ بناتے ہیں اور اسطرح بیٹھنے سے اوپری جسم کو طاقت ملتی ہیں۔دونوں پاؤ کو سمیٹ کر پالتی مار کر بیٹھنا بچوں کے لئےایک اوراچھا طریقہ ہے اس طرح سے گھٹنوں کو تقویت ملتی ہیں اور ریڑھ کی ہڈی پر بھی دباؤ نہیں پڑتا۔ اب آپ بہت آسانی سے اس بات کو جانچ سکتے ہیں آپ کا بچہ کس انداز میں بیٹھتا ہے اگر وہ غلط ہے تو آپ اسے ٹھیک کر سکتے ہیں اور مستقبل میں ہونے والے جسمانی پیچیدگیوں سے بچا سکتے ہیں

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Skip to toolbar